101

انتہا پسندی ، دہشت گردی ، فرقہ وارانہ تشدد اور مقدسات کی توہین اور تکفیر کے خلاف مظلوم فلسطینیوں اور کشمیریوں کی تائید و حمایت کیلئے وحدت اُمت کانفرنس کل ایوان صدر میں ہو گی ۔ کانفرنس کے انتظامات کو حتمی شکل دےدی گئی ہے ، ملک بھر سے تمام مکاتب فکر کے دو سو سے زائد علماء و مشائخ شریک ہوں گے ۔پاکستان علماء کونسل کے مرکزی چیئرمین اور دارالافتاء پاکستان کے صدر حافظ محمد طاہر محمود اشرفی نے کانفرنس کے انتظامات کے حوالہ سے ذرائع ابلاغ سے گفتگو

انتہا پسندی ، دہشت گردی ، فرقہ وارانہ تشدد اور مقدسات کی توہین اور تکفیر کے خلاف مظلوم فلسطینیوں اور کشمیریوں کی تائید و حمایت کیلئے وحدت اُمت کانفرنس کل ایوان صدر میں ہو گی ۔ کانفرنس کے انتظامات کو حتمی شکل دےدی گئی ہے ، ملک بھر سے تمام مکاتب فکر کے دو سو سے زائد علماء و مشائخ شریک ہوں گے ۔پاکستان علماء کونسل کے مرکزی چیئرمین اور دارالافتاء پاکستان کے صدر حافظ محمد طاہر محمود اشرفی نے کانفرنس کے انتظامات کے حوالہ سے ذرائع ابلاغ سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ پاکستان میں مختلف مسالک و مذاہب کے لوگ رہتے ہیں کسی بھی مکتبہ فکر یا مذہب کے ماننے والوں کے مقدسات کی توہین نہیں ہونی چاہیے ۔ انہوں نے کہا کہ علماء و مشائخ ، حکومت اور ملک کے سلامتی کے اداروں کی کوششوں سے محرم الحرام میں امن و امان کی صورتحال برقرار رہی ، بعض افراد نے ضابطہ اخلاق کی خلاف ورزی کی جن کے خلاف قانون حرکت میں آ چکا ہے ۔ آج کی وحدت اُمت کانفرنس کے مہمان خصوصی صدر مملکت ڈاکٹر عارف الرحمن علوی ہوں گے ، کانفرنس سے وفاقی وزیر مذہبی امور پیر نور الحق قادری ، وفاقی وزیر داخلہ برگیڈئیر (ر) اعجاز احمد شاہ سمیت تمام مکاتب فکر کے علماء و مشائخ خطاب کریں گے اور اعلان اسلام آباد کی صورت میں مشترکہ اعلامیہ جاری کیا جائے گا۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں