48

وطن عزیز پاکستان کے دفاع ، سلامتی و استحکام کیلئے پاک فوج اور ملک کے سلامتی کے اداروں کی قربانیاں قابل فخر ہیں اور ماتھے کا جھومر ہیں۔ اسلام اور پاکستان دشمن قوتوں کا نشانہ پاک فوج اور مذہبی طبقہ ہے ۔ ملک میں وحدت اور اتحاد کیلئے تمام مکاتب فکرکے علماء و مشائخ سربکف ہیں : طاہر اشرفی

لاہور(پاسبان نیوز)وطن عزیز پاکستان کے دفاع ، سلامتی و استحکام کیلئے پاک فوج اور ملک کے سلامتی کے اداروں کی قربانیاں قابل فخر ہیں اور ماتھے کا جھومر ہیں۔ اسلام اور پاکستان دشمن قوتوں کا نشانہ پاک فوج اور مذہبی طبقہ ہے ۔ ملک میں وحدت اور اتحاد کیلئے تمام مکاتب فکرکے علماء و مشائخ سربکف ہیں ۔ پارلیمنٹ کا ایک حصہ جائز اور دوسرا ناجائز کیسے ہو سکتا ہے۔ حزب اقتدار اور حزب اختلاف کے درمیان ملکی سلامتی اور استحکام کیلئے رابطے رہنے چاہئیں ۔ ماہ ربیع الاول سیرت رحمۃ للعالمین ﷺ(امن ، رواداری ، محبت ، اتحاد ) کے عنوانات پر منایا جائے گا۔ ربیع الاول میں اسلام میں خواتین کے حقوق پر ایک جمعۃ المبارک کے خطبات ہوں گے ۔ یہ بات چیئرمین پاکستان علماء کونسل و صدر وفاق المساجد و المدارس پاکستان حافظ محمد طاہر محمود اشرفی نے گرینڈ جامع مسجد بحریہ ٹائون میں اجتماع سے خطاب کرتے ہوئے کہی ۔ انہوں نے کہا کہ گذشتہ روز پاک فوج اور ملک کے سلامتی کے اداروں پر حملے کرنے والوں کا مقصد پاکستان کی سلامتی اور امن سے کھیلنا ہے ۔ پاک فوج کے خلاف مہم چلانے والے اسلام اور پاکستان کے دشمن ہیں ۔ پاکستان کی سلامتی اور امن کے خلاف ہندوستان اور اس کے حلیف مسلسل سازشیں کر رہے ہیں ۔ محرم الحرام میں توہین و تکفیر کے سلسلے کا مقصد بھی یہی تھا کہ ملک میں فسادات ہوں ۔ انہوں نے کہا کہ پاک فوج اور ملک کے سلامتی کے اداروں کے خلاف سازشیں کرنے والوں کو برداشت نہیں کیا جا سکتا۔ انہوں نے کہا کہ ماہ ربیع الاول ماہ رحمۃ للعالمین ﷺ کے طو ر پر منایا جائے گا۔ ربیع الاول میں ملک بھر میں پیغام رحمت للعالمین ؐ امن ، محبت ، رواداری کے عنوان پر اجتماعات ہوں گے ۔ انہوں نے کہا کہ ہمیں سیرت مصطفیٰ ﷺ اپناتے ہوئے غریب ، فقراء اور یتیموں کا خیال رکھنا ہو گا۔ دریں اثناء لاہور میں ذرائع ابلاغ سے گفتگو کرتے ہوئے حافظ محمد طاہر محمود اشرفی نے کہا کہ پارلیمنٹ مکمل جائز ہو گی یا مکمل ناجائز ، یہ ممکن نہیں کہ حزب اقتدار کی جیت نا جائز ہو اور حزب اختلاف کی جائز ہو ۔ انہوں نے کہا کہ حزب اختلاف کو جلسے جلوس کا حق ہے لیکن جلسے جلوسوں سے حکومتیں تبدیل نہیں ہوتیں ۔ ہمارا کل بھی مؤقف تھا کہ دھرنوں سے حکومتیں بدلنے کی روش درست نہیں آج بھی یہی کہتے ہیں ۔ انہوں نے کہا کہ مدارس ملک کی سلامتی ، استحکام اور پاک فوج کے خلاف کسی مہم کا نہ کل حصہ تھے نہ آج ہیں۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں