141

21 مئی بروز جمعۃ المبارک کو وزیر اعظم پاکستان عمران خان کی ہدایت پر پورے ملک کے اندر مظلوم فلسطینیوں کے ساتھ یکجہتی کا اظہار کیا جائے گا اور یوم یکجہتی فلسطین منایا جائے گا:حافظ محمد طاہر محمود اشرفی

اسلام آباد(عزیزالرحمان مجاہد سے)21 مئی بروز جمعۃ المبارک کو وزیر اعظم پاکستان عمران خان کی ہدایت پر پورے ملک کے اندر مظلوم فلسطینیوں کے ساتھ یکجہتی کا اظہار کیا جائے گا اور یوم یکجہتی فلسطین منایا جائے گا۔ ملک بھر کے علماء ومشائخ ، آئمہ ، خطباء خطبات جمعہ میں مظلوم فلسطینیوں کی تائید و حمایت کریں گے اور اسرائیلی مظالم کی بھرپور مذمت کی جائے گی ۔ عالمی دنیا سے اپیل کی جائے گی کہ وہ اس ظلم و ستم کو مستقل بنیادوں پر ختم کرنے کیلئے اپنا کردار ادا کریں تا کہ آزاد فلسطینی ریاست قائم ہو جس کا دارالخلافہ القدس ہو ۔ یہ بات چیئرمین پاکستان علماء کونسل و نمائندہ خصوصی وزیر اعظم پاکستان برائے بین المذاہب ہم آہنگی و مشرق وسطیٰ حافظ محمد طاہر محمود اشرفی نے پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کہی ، انہوں نے کہا کہ الحمدللہ اس وقت عالم اسلام میں پاکستان کی حکومت نے اور پاکستان کی عوام نے فلسطینی عوام کے ساتھ جس انداز سے یکجہتی کا اظہار کیا ہے اور کر رہی ہے اس پر فلسطینی عوام بھرپور محبت کا اظہار کر رہی ہے، وزیر اعظم عمران خان مدینہ منورہ اور مکہ مکرمہ تھے تو وہاں پر بھی ان کی ساری توجہ اس بات پر تھی کہ مظلوم فلسطینیوں کشمیریوں کے ساتھ جو ظلم ہو رہا ہے اس کو روکنے کیلئے اقدامات ہونے چائیں۔ پاکستان اسلامی تعاون تنظیم کے ساتھ مل کر امت مسلمہ کے جو مسائل ہیں ان کے حل کیلئے جو بھی ذمہ داری لگائی جائے پاکستان اس کیلئے تیار ہے۔وزیر اعظم پاکستان کا وژن اور سوچ یہ ہے کہ ہم امت مسلمہ کو ایک کریں کیونکہ کوئی ایک ملک ان مسائل پر اس طرح کوئی کردار ادا نہیں کر سکتا جس طرح پور ی امت مل کر کردار ادا کر سکتی ہے ۔وزیر اعظم پاکستان اسلامی ممالک کے سربراہان سے ہر سطح پر رابطے میں ہیں۔ اسرائیل مسلسل بچوں اور عورتوں کو نشانہ بنا رہا ہے ، الاقصیٰ پوری امت مسلمہ کیلئے خط احمر ہے ۔ جس طرح ارض حرمین شریفین ہمارے لیے خط احمر ہے اور کسی کو یہ اجازت نہیں دی جا سکتی کہ وہ ارض حرمین شریفین کے امن و سلامتی سے کھیلے اسی طرح الاقصیٰ بھی مسلم امہ کیلئے خط احمر ہے اس پر کوئی کمپرمائز نہیں ہو سکتا ہے ،عالمی قوتوں کو یہ دیکھنا ہو گا کہ یہ جو ظلم ستم کا سلسلہ جاری ہے اس کو کس طرح بند کیا جائے۔صدر مملکت عارف علوی اور وزیر اعظم کی ہدایات پر پاکستان کی ہلال احمر کو ہدایات دی گئی ہیں کہ ادویات کے سلسلہ میں فلسطینی بھائیوں کیلئے ہر ممکن کوشش کی جائے۔ فلسطین کے صدر ، فلسطین کے قاضی القضاۃ، مفتی اعظم فلسطین ، مسجد اقصیٰ کے آئمہ ، فلسطین کے عوام کی طرف سے پاکستان کا اس طرح شکریہ ادا کیا ہے کہ ہم جو امید اور توقع رکھتے تھے اس سے بڑھ کر پاکستان کی حکومت اور عوام نے ہمارا ساتھ دیا ہے۔پاکستان فلسطین اور کشمیر کیلئے اپنا کردار ادا کرتا رہے گا۔وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی نے وزیر اعظم کی ہدایت پر اسلامی تعاون تنظیم کے وزراء خارجہ کے اجلاس میں یہ بات کہی ہے کہ اسلامی تعاون تنظیم اور مسلم ممالک طے کریں کہ کرنا کیا ہے ، جو چیز طے ہو گی پاکستان اس پر ان کے ساتھ کھڑا ہے ۔فلسطین اور کشمیر امت مسلمہ کے مسائل ہیں ،اب وقت آ گیا ہے کہ فلسطین اور کشمیر میں بہنے والا خون بند ہو ، عالمی دنیا اس طرف توجہ کرے ۔پاکستان اس کے لیے دوسرے مسلم ممالک کے ساتھ مل کر اقوام متحدہ جا رہا ہے۔انہوں نے کہا کہ ان حالات میں امت کو تقسیم کرنے کیلئے افواہ سازی کرنے والوں سے ہوشیار رہنا ہے،اس وقت یہ مسلمانوں کا نہیں انسانی المیہ بن گیا ہے ، خون بہایا جا رہا ہے ۔پاکستان کی حکومت نے نہ کوئی کمی کی ہے اور نہ کوئی کمی کرے گی ،ہمارے دل کے اندر فلسطین ہے ہم فلسطین کا مسئلہ اپنا مسئلہ سمجھتے ہیں۔ توہین ناموس رسالت، اسلامک فوبیا ، کشمیر و فلسطین کا معاملہ ہو یہ امت مسلمہ کے مسائل ہیں۔ہم سب چاہتے ہیں کہ وہ دن قریب آئے کہ ہم الاقصیٰ میں نماز پڑھیں۔کب تک فلسطینی اور کشمیری قربانیاں دیتے رہیں گے، کشمیر اور فلسطین کا معاملہ حل کیے بغیر دنیا میں امن قائم نہیں ہو سکتا۔ایک سوال کے جواب میں حافظ محمد طاہر محمود اشرفی نے کہا کہ پاکستان سعودی عرب سمیت تمام اسلامی ممالک سے رابطے میں ہے ، اسلامی تعاون تنظیم ہی واحد مسلمان ممالک کی متفقہ تنظیم ہے اور اس وقت اس کی سربراہی سعودی عرب کے پاس ہے ۔ سعودی عرب اور پاکستان کا فلسطین کے مسئلہ پر موقف ایک ہے ، انہوں نے کہا کہ سیز فائر پہلی ترجیح ہے اور ان شاء اللہ پاکستان اپنی کوششوں میں کامیاب ہو جائے گا۔

3 Attachments

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں